GCU has zero tolerance policy for plagiarism: Vice Chancellor

GCU has zero tolerance policy for plagiarism: Vice Chancellor

The Government College University Lahore has zero tolerance policy for plagiarism in online examinations, said Vice Chancellor Prof. Dr. Asghar Zaidi negating a myth that students can only be assessed properly in the conventional mode of examinations.

 

“Our experience is different. We prepare questions in such a way that test the students’ ability to consult and comprehend multiple sources, analyses the information they gather and make a critical argument,” said Prof. Dr. Asghar Zaidi in a press statement issued here on Tuesday with a schedule for the university’s online examinations.

 

The GCU Lahore will be conducting online examinations for the bachelor degrees in the last week of May. The examinations will be conducted according to the University’s new online education policy.

 

“The mode of examination can be a time-bound open book, open internet paper or long essay and viva,” said Prof. Zaidi.

 

The VC said that they are conducting the online exams not only due to a pandemic situation but also because it has a potential to be better system of assessment than the conventional sit-in examinations.

 

“Those who enter the university education after intermediate are only good at rote learning and reproducing information. They find it hard to build a coherent discussion in the sit-in examinations,” he said.

 

The Vice Chancellor highlighted that GCU’s online assessment policy develops students’ argumentative skills which is the main objective of higher education.

 

“A committee is deliberating to adopt this online assessment policy permanently as one of the modes of examinations for the faculties of Humanities and Social Sciences”, Prof. Zaidi released.

 

During online examinations, the University will give a user id to each student for every course to submit their papers to Turnitin software for the plagiarism check. This will ensure original and timely submissions

 

While commenting on the uncertain condition due to the Covid-19 crisis, Prof Zaidi said: “Western Universities responded to the pandemic by immediately adopting online assessment strategy for the next two to three years. It gave them certainty and prepared students and faculty members for online mode of examinations.”

 

The Vice Chancellor said the Pakistani universities should have followed a similar policy instead of relying on fortnightly announcements concerning lockdowns. “Uncertainty is affecting our university education,” Prof. Zaidi concluded.

جی سی یو نیورسٹی آن لائن امتحانات کا شیڈول جاری
چربہ سازی کے لیے زیرو ٹالرینس پالیسی ہوگی:وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر اصغر زیدی

گورنمنٹ کالج یونیورسٹی لاہور میں آن لائن امتحانات میں چربہ سازی کے لیئے زیرو ٹالرینس پالیسی ہے،یہ سوچ درست نہیں کہ طلباء کے معیار اور صلاحیت کو صرف روائیتی طریقہ امتحانات سے ہی جانچا جا سکتا ہے۔ان خیالات کا اظہار گزشتہ روز جی سی یو کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر اصغر زیدی نے یونیورسٹی کے آن لائن امتحانات کا شیڈول جاری کرتے ہوئے کیا۔وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر اصغر زیدی کا کہنا تھا کہ آن لائن امتحانات کے حوالے سے جی سی یو کا تجربہ قدرے مختلف رہاہے،ہمارے اساتذہ آن لائن امتحانات کے لیئے اس طرح سے سوالات تیار کرتے ہیں،جس میں طلباء کی معتدد ذرائع سے حاصل کردہ معلومات،ان کی تفہیم اور تنقیدی دلیل پیش کرنے کی صلاحیت کو جانچا جا سکے۔جی سی یو لاہور مئی کے آخری ہفتے میں بی اے بی ایس سی (آنرز)کی ڈگریوں کے لیے آن لائن امتحانات لے گا،امتحانات کو یونیورسٹی کی آن لائن ایجوکیشن پالیسی کے مطابق لیا جائے گا،جس کے طریقہ کار میں اوپن بک،اوپن انٹر نیٹ اور طویل مضمون نویسی شامل ہو سکتی ہے۔وائس چانسلر کا کہنا تھا کہ جو لوگ انٹر میڈیٹ کے بعد یونیورسٹی میں داخلہ لیتے ہیں وہ زیادہ تر معلومات کو سمجھنے کی بجائے ان کو یاد کرکے لکھنے کے عادی ہوتے ہیں،جبکہ آن لائن امتحانات کے ذریعے طلباء کی دلیلی مہارتوں کو جانچا جاتا ہے،جو کہ اعلیٰ تعلیم کا بنیادی مقصد ہے۔وائس چانسلر نے کہا کہ جدید سوفٹ وئیر کی مدد سے جی سی یو آن لائن امتحانات میں چربہ سازی پر نظر رکھے گااور اس حوالے سے زیرو ٹالرینس پالیسی کو اپنایا جائے گا۔پروفیسر زیدی کا کہنا تھا کہ مغربی یونیورسٹیوں نے کورونا وباء کی وجہ سے اگلے 2سے3سال کے لیئے آن لائن ایجوکیشن کو نافذ العمل کر دیا ہے اور اپنے طلباء اور اساتذہ کو آن لائن امتحانات کے تیار کیا ہے۔پروفیسر زیدی نے مزید کہا کہ پاکستانی یونیورسٹیوں کو بھی لاک ڈاؤن کے حوالے سے اعلانات پر انحصار کرنے کی بجائے ایک مسلسل طریقہ کار اور پالیسی کو اپنانا چاہیئے تاکہ غیر یقینی صورتحال ہمارے تعلیمی نظام کو متاثر نہ کر سکے۔

Give a Reply